وسوسه = قرآن وحدیث پرعمل کرنے کے لیئے کسی امام کی تقليد كى کوئی ضرورت نہیں هے بلکہ ازخود هرشخص مطالعہ وتحقیق کرکے قرآن وحدیث پرعمل کرے

وسوسه = قرآن وحدیث پرعمل کرنے کے لیئے کسی امام کی تقليد كى
کوئی ضرورت نہیں هے بلکہ ازخود هرشخص مطالعہ وتحقیق کرکے قرآن وحدیث پرعمل کرے
جواب = یہ باطل وسوسہ عوام الناس کومختلف انداز سے سمجهایا جاتا
هے ، اور مقصد اس کا یہ هوتا هے کہ عوام کو دین میں آزاد بنا دیا جائے ، اور سلف صالحین
وعلماء حق کی اتباع سے نکال کر درپرده چند جاهل لوگوں کی اتباع پران کو مجبور کیا جائے
، یہ وسوسہ درحقیقت بڑا خطرناک وگمراه کن هے
کیا صرف مطالعہ کے ذریعہ علوم دینیہ کوحاصل کیا جاسکتا هے ؟؟؟
کون نہیں جانتا کہ هرعلم وفن میں کمال ومہارت حاصل کرنے کے لیئے
اس علم وفن کے ماهر ومستند لوگوں کی طرف رجوع کرنا پڑتا هے ، اور اس علم وفن کے تمام
شروط ولوازم اصول وقواعد کی پابندی لازمی هوتی هے ، هر علم وفن کے اندر کچھ خاص محاورات
واصطلاحات هوتے هیں ، اور اتارچڑهاو کا ایک خاص انداز هوتا هے ، جس کا سمجهنا بغیرکسی
ماهراستاذ کے ممکن نہیں هے ، اور تو اور دنیوی فنون کو دیکھ لیجیئے کہ بزور مطالعہ
کسی بهی فن میں مہارت ناقابل قبول سمجهی جاتی هے ، جب دنیوی فنون کا یہ حال هے جوانسانوں
کی اپنی ایجاد کرده هیں ، تو الله ورسول کے کلام کو پڑهنے وسمجهنے کے لیئے صرف ذاتی
مطالعہ کیونکر کافی هوگا ، جب کہ الله ورسول کے بیان کرده احکامات اور کلام وحی سے
متعلق هے ، جس میں انسانی عقل وسمجھ کو کوئی دخل نہیں هے
الله تعالی کی سنت ماضیہ ، بغیراستاذ ومُعلم صرف کتابوں کے ذریعہ
قرآن وحدیث کا مقصد ومطلب وحقیقی مراد پالینا ممکن نہیں هے
ابتداء سے هی الله تعالی نے انبیاء ورسل کا سلسلہ مبارکہ جاری
فرمایا ، اور یہ سلسلہ مبارکہ جناب محمد رسول الله صلى الله عليه وسلم كى بعثت مباركه
پرهمیشہ همیشہ کے لیئے ختم هوچکا هے ، اگر صرف انسانی مطالعہ هی کافی هوتا ، تو الله
تعالی بجائے نبی ورسول بهیجنے کے صرف کتابیں نازل کرتا ، اور انسان اس کی مد د سے ازخود
الله تعالی کی معرفت اور الله تعالی کے کلام کی مراد ومقصود کی فہم حاصل کرتا ، لیکن
تاریخ اور کتاب وسنت کی صریح نصوص سے یہ بات ثابت هوچکی هے کہ الله تعالی نے کوئی ایسی
کتاب نازل نہیں کی جس کے ساتھ مُعلم یعنی نبی کو نہ بهیجا هو ” تورات ” کے
ساتھ حضرت موسی ” انجیل ” کے ساتھ حضرت عیسی ” زبور ” کے ساتھ
حضرت داود اور اسی طرح ” صُحُف ” حضرات ابراهیم کے ذریعہ لوگوں کو پہنچے
. صلوات الله وسلامه علیهم اجمعین
اورقرآن مجید جوسید الکتب هے ، جناب خاتم الانبیاء محمد رسول
الله صلى الله عليه وسلم پرنازل کی گئ ، کیا ان کتب الهیہ کے تصور کوبغیر انبیاء ورسل
کے کوئی کامل ومکمل تصور کہا جاسکتا هے ؟ یقینا کوئی بهی سنجیده انسان اس بات کا جواب
اثبات میں نہیں دے سکتا ، اگر صرف کتابوں کے ذریعہ صحیح نتیجہ تک پہنچنا ممکن هوتا
اور خود هی کتاب پڑھ کر الله تعالی کی مُراد ومقصود حاصل کرنا ممکن هوتا تو ان انبیاء
صلوات الله وسلامه علیهم اجمعین کی بعثت کیوں ضروری تهی ؟ قرآن مجید خاتم الکتب هے
، جو خاتم الانبیاء محمد رسول الله صلى الله عليه وسلم کے واسطہ سے هم تک پہنچا ، اگر
صرف کتاب کے ذریعہ صحیح نتیجہ تک پہنچنا ممکن هوتا ، توخاتم الانبیاء محمد رسول الله
صلى الله عليه وسلم کے فرائض منصبی میں سے ایک اهم فرض تلاوت آیات اور تعلیم کتاب کیوں
لازم کیا گیا ؟ آپ كى بعثت مبارکہ کیوں ضروری تهی ، اور اس قدر اذیت وتکلیف ومشقت کی
تاریخ کیوں مرتب کی گئ ؟ کیا اهل مکہ عربی زبان نہیں سمجهتے تهے ؟ قرآن کسی ذریعہ سے
نازل کردیا جاتا ، اور عوام وخواص اس کو پڑھ کر ازخود سمجهنے کی کوشش کرتے ، اسی طرح
حضرت جبریل علیہ السلام کو درمیان میں کیوں واسطہ بنایا گیا ؟ خود براه راست خاتم الانبیاء
محمد رسول الله صلى الله عليه وسلم تک قرآن مجید پہنچا دیا جاتا لیکن ایسا نہیں کیا
گیا ، جس میں واضح تعلیم هے کہ بغیراستاذ ومُعلم صرف کتابوں کے ذریعہ قرآن وحدیث کا
مقصد ومطلب وحقیقی مراد پالینا ممکن نہیں هے
دین کوسمجهنے کے لیئے ” کتابُ الله اور رجالُ الله
” لازم وملزوم ہیں
اسی ” سُنة الله ” کے تناظر میں یعنی کتاب کے ساتھ
مُعلم کا هونا ضروری هے ، علماء حق علماء دیوبند اور جميع أهل سنت كا یہی مسلک هے کہ
دین صرف کتابی حروف ونقوش کا نام نہیں هے ، اور نہ دین کو محض کتابوں سے سمجها جاسکتا
هے ، الله تعالی نے همیشہ کتاب کے ساتھ رسول کو مُعلم بنا کر اس لیئے بهیجا تاکہ وه
اپنے قول وفعل وعمل سے کتاب کی تفسیر وتشریح کرے ، چنانچہ ایسی مثالیں توملتی هیں کہ
دنیا میں رسول بهیجے گئے مگرکتاب نہیں آئی ، لیکن ایسی مثال ایک بهی نہیں هے کہ صرف
کتاب بهیج دی گئ هو ، اور اس کے ساتھ رسول مُعلم بن کر نہ آیا هو ، الله تعالی کی یہ
سنت بتلاتی هے کہ دین کو سمجهنے سمجهانے اور پهیلانے پہنچانے کا راستہ وطریقہ صرف کتاب
نہیں هے ، بلکہ اس کے ساتھ وه اشخاص وافراد بهی هیں ، جو کتاب کا عملی پیکربن کراس
کتاب کی تشریح وتفسیر کرتے هیں ، لہذا دین کوسمجهنے کے لیئے ” کتابُ الله اور
رجالُ الله ” لازم وملزوم کی حیثیت رکهتے هیں ، ان میں سے ایک کودوسرے سے جدا
نہیں کیا جاسکتا ، لہذا ” کتاب الله ” کو جناب خاتم الانبیاء محمد رسول الله
صلى الله عليه وسلم کی تفسیر وتشریح کی روشنی میں اور سنت وحدیث رسول الله صلى الله
عليه وسلم کو صحابہ کرام وتابعین وتبع تابعین وسلف صالحین کی تفسیر وتشریح وتحقیق کی
روشنی میں هی ٹهیک ٹهیک سمجها جاسکتا هے ، اس کے بغیر دین کی اور قرآن وحدیث کی تعبیروتشریح
کی هرکوشش گمراهی کی طرف هی جاتی هے ،
تمام صحابہ کرام اهل لسان تهے ، عربی ان کی مادری زبان تهی ،
مگر مقاصد قرآن سمجهنے کے لیئے جناب خاتم الانبیاء محمد رسول الله صلى الله عليه وسلم
کی تفسیر وتشریح وتعلیم کے محتاج تهے ، اورآپ کی طرف هی رجوع کرتے تهے ، اپنی سمجھ
وفہم کوانهوں نے کافی نہیں سمجها ، اورصحابہ کرام اهل لسان هونے کے ساتھ ساتھ فصاحت
وبلاغت اورتمام دیگرصفات میں اعلی مقام رکهتے تهے ، لیکن اس کے باوجود قرآن سمجهنے
کے لیئے خاتم الانبیاء محمد رسول الله صلى الله عليه وسلم کی طرف هی رجوع کرتے تهے
،
تومعلوم هوا کہ صرف عربی لغت پڑھ لینا بهی کافی نہیں ، اور نہ
صرف مطالعہ کافی هے ، اورتاریخ وتجربہ شاهد هے کہ جس شخص نے بهی اساتذه وماهرین کی
مجلس میں بیٹھ کر باقاعده تمام اصول وقواعد کی روشنی میں علم دین حاصل نہیں کیا ، بلکہ
قوت مطالعہ کے ذریعے کتاب وسنت سمجهنے کی کوشش کی توایسا شخص گمراهی سے نہیں بچا ،
اسی طرح جس شخص نے اپنے ناقص عقل وفہم پراعتماد کیا ، اور کسی ماهر مستند استاذ ومُعلم
سے باقاعده علم حاصل نہیں کیا ، توایسا شخص خود بهی گمراه هوا اور دیگر لوگوں کو بهی
گمراه کیا ،
اورآج کے اس پرفتن دور میں لوگ اردو کے ایک دو رسالے پڑهہ کر
اور قرآن وحدیث کا اردوترجمہ پڑھ کر بڑے فخرکرتے هیں کہ اب هم کو کسی امام ومعلم کی
کوئ ضرورت نہیں هے ، اب هم بڑے کامل هوچکے هیں ، ایسے جاهل لوگ اپنے ناقص عقل وفہم
کی مدح سرائی کرتے هوئے تهکتے نہیں هیں ،
اور آج کل جاهل عوام میں یہ وباء فرقہ جدید نام نہاد اهل حدیث
کی جانب سے پهیلائ جارهی هے ، هرجاهل ومجهول کو مُجتهد کا درجہ دیا هوا هے ، اور فی
زمانہ وسائل اعلام ( میڈیا کے ذرائع ) کی کثرت کی بنا پر اس فرقہ جدید نام نہاد اهل
حدیث میں شامل هرکس وناکس انتہائی دلیری کے ساتھ اپنی جہالت وحماقت وضلالت کو هرممکن
ذریعہ سے پهیلا رها هے ، اسی لیئے احادیث صحیحہ میں ایسے شخص کے لیئے جہنم کی سخت وعید
وارد هوئی هے ، کہ جو شخص اپنی خیال ورائ سے یا بغیر علم کے قرآن میں کوئی بات کرتا
هے
قرآن میں اپنی رائے وخیال سے بات کرنے اور بغير علم قرآن کی
تفسیر والوں کے لیے سخت ترین وعید
1 = عن ابن عباس رضي الله عنهما
قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم من قال في القرآن برأيه فليتبوأ مقعده من النار
2 = عن ابن عباس رضي الله تعالى
عنهما عن النبي صلى الله عليه وسلم قال من قال في القرآن بغير علم فليتبوأ مقعده من
النار
3 = عن جندب بن عبد الله البجلي
رضي الله عنه قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم من قال في القرآن برأيه فأصاب فقد
أخطأ
4 = عن ابن عباس قال من تكلم
في القرآن برأيه فليتبوأ مقعده من النار
تفسير البغوي الجزء الأول
5 = وعن ابن عباس أن رسول الله
صلى الله عليه وسلم قال من قال في القرآن برأيه وفي رواية من غير علم فليتبوأ مقعده
من النار . رواه الترمذي في كتاب تفسير القرآن وحسنه
خلاصہ ان روایات کا یہ هے کہ جس شخص نے قرآن میں اپنی رائے وخیال
سے بات کی یا بغیرعلم کے کوئی بات کی تو وه شخص اپنا ٹهکانہ جہنم بنا لے ، یا قرآن
میں اپنی رائے سے کوئی بات کی اوربات صحیح بهی نکلے تب بهی اس نے خطا اور غلطی کی
.
یقینا اتنی سخت وعید سننے کے بعد ایک مومن آدمی قرآن میں اپنی
رائے وخیال سے بات کرنے کی جرأت نہیں کرسکتا ، اوران احادیث کی روشنی میں فرقہ جدید
اهل حدیث کی حالت کوملاحظہ کریں ، کہ هرجاهل مجهول آدمی کو قرآن میں رائے زنی کا حق
دیا هوا هے ، جب کہ اس فرقہ شاذه میں شامل اکثر لوگوں کی حالت یہ هے کہ قرآن کے علوم
ومعارف پر دسترس تو کجا قرآن کی صحیح تلاوت بهی نہیں کرسکتے ، همارے اسی زمانہ کے فتنوں
کے سد باب اور روک تهام کے لیئے هی حضور صلی الله علیہ وسلم نے یہ ارشاد فرما دیا تها
شرعي علم مستند وحقیقی علماء سے سیکهنا ضروری ہے
عَنْ مُعَاوِيَةَ قَالَ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ
عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ يَا أَيُّهَا النَّاسُ إِنَّمَا الْعِلْمُ بِالتَّعَلُّمِ
وَالْفِقْهُ بِالتَّفَقُّهِ وَمَنْ يُرِدِ اللَّهُ بِهِ خَيْرًا يُفَقِّهْهُ فِي الدِّينِ
وَإِنَّمَا يَخْشَى اللَّهَ مِنْ عِبَادِهِ الْعُلَمَاءُ . أخرجه الطبراني في المعجم
الكبير وفي مسند الشاميين والخطيب البغدادي في الفقيه والمتفقه . وقال الهيثمي في مجمع
الزوائد رواه الطبراني في الكبير وفيه رجل لم يسم وعتبة بن أبي حكيم وثقه أبو حاتم
وأبو زرعة وابن حبان وضعفه جماعة
حافظ ابن حجر العسقلانی رحمہ الله فرماتے هیں ( وإنما العلم
بالتعلم ) مرفوع حدیث هے ، جس کو ابن أبي عاصم اور طبراني نے حضرت معاویہ رضي الله
عنه سے ان الفاظ کے ساتھ روایت کیا ( يا أيها الناس تعلموا إنما العلم بالتعلم والفقه
بالتفقه ومن يرد الله به خيرا يفقهه في الدين ) . اور اس کی سند حسن ہے
.
وقال في فتح الباري (1/161) قوله “وأنما العلم بالتعلم”
هو حديث مرفوع أيضا أورده بن أبي عاصم والطبراني من حديث معاوية أيضا بلفظ يا أيها
الناس تعلموا إنما العلم بالتعلم والفقه بالتفقه ومن يرد الله به خيرا يفقهه في الدين
إسناده حسن إلا أن فيه مبهما اعتضد بمجيئه من وجه آخر وروى البزار نحوه من حديث ابن
مسعود موقوفا ورواه أبو نعيم الأصبهاني مرفوعا وفي الباب عن أبي الدرداء وغيره فلا
يغتر بقول من جعله من كلام البخاري .اه
ـ
حافظ ابن حجر العسقلانی رحمہ الله فرماتے هیں کہ
والمعنى ليس العلم المعتبر إلا الماخوذ من الأنبياء وورثتهم
على سبيل التعلم
( فتح الباري ج 1 ص 148 )
یعنی معنی اس حدیث (يا أيها الناس تعلموا إنما العلم بالتعلم
الخ ) کا یہ هے کہ معتبر ومستند علم وهی هے ، جو انبیاء اور ان کے ورثاء یعنی علماء
سے بطریق تعلیم وتعلم حاصل کیا جائے
.
یہاں سے یہ مسئلہ بالکل واضح هوگیا ، کہ جو لوگ اردو کے چند
رسائل پڑھ کر یہ سمجهتے هیں کہ اب هم مجتهد وامام بن چکے هیں ، اب همیں کسی امام کی
تقلید کی کوئی ضرورت نہیں هے ، اب هم نے خود هی قرآن وحدیث کو سمجهنا هے، ایسے لوگ
درحقیقت بہت بڑی غلط فہمی میں مبتلا هیں ، اورایسے لوگوں کے ساتھ شیطان اس طرح کهیلتا
هے ، جس طرح بچے بال کے ساتھ کهیلتےهیں ،
لہذا لائق اعتماد اورقابل عمل وهی علم هے ، جو انبیاء علیهم
السلام سے بطور اسناد حاصل کیا گیا هو ، یہی وجہ هے اهل حق کے یہاں مدارس ومکاتب میں
آج تک یہی مبارک طریقہ رائج هے ، اور عہد نبوی سے لے کرآج تک منزل بہ منزل اس کا باضابطہ
سلسلہ چلا آرها هے ، اور اهل حق کے یہاں علم حدیث کی تعلیم کے لیئے ” اجازت
” کی ضرورت لازم هوتی هے ، ایسا نہیں هے کہ هرشخص جاهل ومجهول اپنے آپ کو مُحدث
، مُفسر ، فقیہ وغیره القابات سے یاد کرے ، اور بغیرپڑهے لکهے اجتهاد وامامت کا دعوی
کرے ، تاریخ میں ایسے افراد کی کئ مثالیں موجود هیں ، جنهوں نے اپنے عقل و فہم اور
قوت مطالعہ پراعتماد کرکے قرآن وحدیث کو سمجهنے کی کوشش کی تو خود بهی گمراه هوئے ،
اور اپنے ساتھ ایک خلق کثیر کوگمراه کیا ، اور اس باب میں ان لوگوں کےسینکڑوں واقعات
هیں ، جنهوں نے بغیراستاذ ومُعلم فقط ترجمہ یا ظاهری الفاظ کوپڑھ کر راهنمائی حاصل
کرنے کی کوشش کی تو وه صحیح مفہوم کو نہ پاسکے ، بلکہ صحیح مفہوم ومراد کواسی وقت پہنچے
جب کسی اهل علم کی رجوع کیا
کسی بهی علم وفن کے حصول کے دو طریقے هیں
حاصل کلام یہ هے کہ گذشتہ تفصیل سے یہ بات خوب واضح هوگئ ، اور
یہ حقیقت بالکل عیاں هوگئ ، کہ کسی بهی علم وفن کے حصول کے دو طریقے هیں
1 = مطالعہ کے ذریعے بذات خود
چند اردو یا عربی کتب ورسائل پڑھ کر
2 = دوسرا طریقہ یہ هے کہ کسی
بهی باکمال وماهراستاذ ومُعلم کی مجلس میں باقاعده حاضر هوکر بالمشافه تمام شروط وآداب
کی رعایت کرتے هوئے سبقا سبقا اس علم کو پڑها جائے
یقینا ان دونوں طریقوں میں پہلا طریقہ بالکل غلط اور گمراه کن
هے
یقینی طور پرتحصیل علم کا مفید اور کامیاب اورقابل اعتماد طریقہ
وه دوسرا طریقہ هے ، اسی طریقہ کی طرف حضورصلى الله عليه وسلم نے هماری راهنمائی فرمائی
هے ، تاریخ اورسلف صالحین کا عمل شاهد هے ، کہ کسی بهی زمانہ اس کا خلاف نہیں کیا گیا
، لہذا بطون کتب سے کوئی بهی قرآن وحدیث کو نہیں سمجھ سکتا ، صحيح البخاري میں حضرت
عمر رضی الله عنہ کا قول هے
(وقال عمر تفقهوا قبل أن
تسودوا ، باب الاغتباط في العلم والحكمة ) علم حاصل کرو فقہ حاصل کرو سردار وقائد بنائے
جانے سے پہلے . امام أبو عبيد نے اپنی کتاب (غريب الحديث ) میں فرمایا کہ معنی اس قول
کا یہ هے کہ بچپن میں علم اورفقہ حاصل کرو قَبل اس کے کہ تم سردار ورئیس بن جاو تو
پهرتم اپنے سے کم مرتبہ سےعلم حاصل کرنے میں عارمحسوس کروتواس طرح تم جاهل ره جاو گے
.
اس کے بعد امام بخاری رحمہ الله نے فرمایا
وقد تعلم أصحاب النبي صلى الله عليه وسلم بعد كبرسنهم
یعنی صحابہ کرام نے بڑی بڑی عمروں میں علم حاصل کیا
الله تعالی عوام وخواص اهل اسلام کو صحیح سمجھ دے اورکتاب وسنت
کو اس کے اهل لوگوں سے پڑهنے سمجهنے اوراس پرعمل کرنے کی توفیق دے

By Mohsin Iqbal

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s